• May 20, 2022

Daily Gadyal

Latest News From Jammu & Kashmir

کشمیرمیں وائٹ کالر دہشتگردی۔

Byadmin

Dec 19, 2021

Sheikh Qayoom

ہم سب وائٹ کالرکرائم کے بارے میں جانتے ہیں،ایک اصطلاح جسے امریکی ماہرعمرانیات ایڈون سدرلینڈ نے 1939 میں وضع کیاتھااوراسکی تعریف بڑے پیمانے پرایک ایسے جرم کے طورپرکی گئی ہے جوقابل احترام اوراعلی ٰسماجی حیثیت کے حامل شخص نے اپنے پیشے کے دوران کیاتھا۔ وائٹ کالرجرم عام طورپرمجرم کے سماجی طبقے کی بنیادپربلیوکالرکرائم سے مختلف ہوتاہے۔جبکہ ایک بلیوکالرمجرم عام طورپرچوری،چوری،جنسی جرائم،حملہ یامنشیات کے استعمال جیسے جرائم کا ارتکاب کرتاہے،وہیں ایک سفیدکالرمجرم،اسی طرح کے جرائم کاارتکاب کرے گا،جیسے کہ وائرفراڈ،جعلسازی، منی لانڈرنگ، فنڈغبن یامزید کچھ میں اسکی وضاحت کشمیرمیں ’وائٹ کالردہشتگردی‘کے حالیہ ظہور کے پیش نظرکرتاہوں۔ یہ اصطلاح کاایک فرق ہے۔

وائٹ کالردہشتگردی آج کل کشمیرمیں چل رہی ہے اس سے مراد وادی کے اندراورباہرکام کرنے والے سفیدکالروالے افرادکی متعدد مثالیں ہیں۔انہوں نے پاکستان میں اپنے سرحدپارہینڈلرزکے لیے فرمانبردارماوتھ پیس کے طورپرکام کرکے اپنے اور اپنے بچوں کے لیے اچھاکیاہے۔

سیدعلی شاہ گیلانی،جموں وکشمیرمیں ایک اسلام پسند،پاکستان کے حامی،علیحدگی پسند رہنما،جنہوں نے تحریک حریت کے گیلانی دھڑے کی بنیادرکھی،عام طورپرتشددکوبھڑکانے اور پاکستان کے خلاف کارروائی کے طورپرکام کرنے کے لیےجاناجاتاتھا، ایسی ہی ایک مثال ہے۔اسکابیٹا،نعیم اوراسکی بیوی دونوں ڈاکٹرہیں،جبکہ اسکا دوسرابیٹا،نسیم،ST SKUA ،کشمیرمیں بطورپروفیسرکام کرتاہے۔گیلانی کاپوتابھارت کی ایک نجی ایئرلائن عملے کارکن ہے،جبکہ انکی بیٹی فرحت سعودی عرب میں ٹیچر ہے۔اسکے پوتے کو 2016 میں پچھلے دروازے سے ریاستی حکومت کے ایک محکمے میں ریسرچ اسسٹنٹ کے طور پرتعینات کیاگیاتھا،جب عسکریت پسندکمانڈر برہان وانی کی فائرنگ کے تبادلے میں ہلاکت کے بعد وادی پرتشدد مظاہروں میں پھوٹ پڑی۔گیلانی کے دامادالطاف احمدشاہ کی بیٹی روواشاہ ایک صحافی ہیں اورالجزیرہ،آئی اے این ایس اور دی انڈین ایکسپریس جیسی معروف تنظیموں کے ساتھ کام کرچکی ہیں۔
سیدعلی شاہ گیلانی اورانکااہل خانہ صرف ایک مثال ہے۔بہت سے دوسرے لوگ آسانی سے اسپاٹ لائٹ سے بچ گئے ہیں،کیونکہ وہ اپنے گھروں میں آرام سے بیٹھتے ہیں اورکشمیرمیں تشددکو ہوا دیتے ہیں جبکہ وادی میں تنازعہ کو زندہ رکھنے کے واحد مقصدکے ساتھ قوم کے خلاف نفرت پھیلاتے ہیں۔آسیہ اندرابی، “دختران ِملت” کی بانی رہنما،وادی کی سرکردہ علیحدگی پسندخواتین میں سے ایک تھیں۔اس نے 1990 میں حزب المجاہدین کے بانی رکن قاسم فکتو سے شادی کی اور 2010 کی پتھر بازی کی ریلیوں میں مسرت عالم کی حمایت کرنے کے لیے مشہور ہیں۔اس نے 25 مارچ 2015 کوکشمیرمیں پاکستان کاجھنڈا لہرایا اور پاکستانی قومی ترانہ گایا۔اس نے اپنے بیٹے کواعلیٰ تعلیم کے لیے ملیشیا بھیجااوراسکے لیے پاسپورٹ کاانتظام بھی کیا۔ آسیہ کو 6 جولائی 2018 کونیشنل انویسٹی گیشن ایجنسی نے بھارت کے خلاف جنگ چھیڑنے کے الزا م میں حراست میں لیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں: کشمیرمیں دہشتگردی کاگیم پلان۔

ان ہائی پروفائل ’وائٹ کالردہشتگردوں‘کے علاوہ کشمیرکے معاشرے میں بہت سے دوسرے بھی ہیں۔حاجن سے تعلق رکھنے والے اقبال وانی،ایک اوسط نچلے متوسط گھرانے نے نوجوانوں کو پتھراوکے لیے اکسایا، اسے پاکستانی آئی ایس آئی اوردہشتگرد تنظیم کے ہینڈلرزکی حمایت ملی۔اسے دہشتگردوں کو بھرتی کرنے کاکام سونپاگیاتھا۔سلیم پرے اورنثاراحمدڈاران کے ناموراداکارتھے۔اقبال وانی کے لیے پیسے بہہ گئے۔ایک اچھے دن،نیلے رنگ میں،اسکے بھائیوں میں سے ایک نے ملٹی ملین قالین کاکاروبارکھولا۔دوسرے بھائی کے پاس پک اپ ٹرکوں کا بیڑا ہے۔خاندان اب امیر ہے۔ابھی تک،جبکہ سلیم پرے فرارہے اورنثاراحمدڈارجیل میں بندہیں،بہت سے لڑکوں کامستقبل تباہ ہوگیاہے جوانکی طرف سے پتھراو پراکسائے گئے ہیں۔

کشمیرمیں آج جوغیرحل شدہ مسئلہ ہے،وہ مٹھی بھر “حاصلات” کے ذریعے “حاصل نہیں” کااستحصال ہے۔گیلانی اورآسیہ جنہوں نے اپنے لیے آرام دہ زندگی بسرکی،کشمیری نوجوانوں کوبھارت کے خلاف جہاداور ”آزادی کے لیے لڑنے“پراکساتے رہے،جبکہ انکے اپنے بچے تعلیم اوردیگرمراعات حاصل کرنے کے لیے بحفاظت باہرکی سرزمینوں میں پھنس گئے۔ایسے سفیدپوش دہشتگردوں کی طرف سے اپنایاجانے والادوغلاپن انتہائی غربت،ناخواندگی، عدم رسائی اورمذہبی بنیاد پرستی کے ہاتھوں دیوا رسے ٹیکنے والوں کی نظروں سے بچ جاتاہے۔

اسکے بعد،امریکہ،لندن،ترکی اور یورپ اورمتحدہ عرب امارات کے کچھ حصوں کی طرح دیگرممالک میں بڑے پیمانے پرقائم کیے گئے آئی ایس آئی کے زیراہتمام ڈائاسپوراکاظہورہوتاہے۔یہ آئی ایس آئی سپانسرڈسیلزبڑی پروپیگنڈہ مشینری کاحصہ ہیں اور زیادہ تر ان لوگوں پرمشتمل ہیں جنہوں نے کشمیرمیں تنازعہ کوہوادی ہے۔غلام نبی فائی جنہوں نے استارکین وطن کی سربراہی کی تھی،بالآخر 2011 میں ایف بی آئی نے آئی ایس آئی پاکستان سے ملنے والے 3 ملین امریکی ڈالرکے فنڈزکوچھپانے کے الزام میں گرفتارکیا اوراسکے بعد،اس نے الزام کااعتراف کیااورانہیں قیدکردیاگیا۔یہ آئس برگ کاسرہ نکلا۔اگلے برسوں میں،پاکستان کی آئی ایس آئی نے مزیدکشمیریوں کااندراج کیااورانہیں دوسرے بیرونی ممالک میں مراعات،مراعات،پیسے اوروظائف فراہم کیے جس کاواحدایجنڈابھارت مخالف بیانیہ چلانے اورجہادکی تبلیغ کرناتھا،بنیادی طورپرسوشل میڈیاچینلزکے ذریعے۔انہوں نے کشمیرمیں قتل کی فیکٹریوں کوفعال رکھنے کے لیے ان سفیدپوش دہشتگردوں کوبڑے پیمانے پرمالی امدادفراہم کی۔

ان میں نمایاں نام مزمل ایوب ٹھاکرہے،جسکے والد،ایوب ٹھاکر،ایک مشہورمنی لانڈررتھے جووادی کشمیرمیں دہشتگردی کی سرگرمیوں کوفنڈنگ کرتے تھے جبکہ وہ برطانیہ سے محفوظ طریقے سے کام کرتے تھے،جہاں اس نے اپنے اوراپنے خاندان کے لیے پرتعیش زندگی گزاری۔اس کے بیٹے نے اب آئی ایس آئی کے لیے والدکے منی لانڈرنگ کاکاروبارسنبھال لیاہے اورلندن سے کشمیرکے نوجوانوں کوہندوستانی سول سوسائٹی کے خلاف تشددکے لیے اکسانے کے لیے بھارت مخالف بیانیہ کی سربراہی کررہاہے۔

یہ بھی پڑھیں: بھاگنابندکرنے کاوقت۔

ایک اورکشمیری،آصف ڈار،جواصل میں سوپورسے تعلق رکھتاتھا،اوراس وقت یواے ای اورترکی کے درمیان شٹلنگ کرتارہتاہے،ابتدامیں جنتادل یونائیٹڈاورپیپلزکانفرنس جیسی ہندوستانی مرکزی دھارے کی حامی سیاسی جماعتوں سے وابستہ تھا۔سوپوراورملحقہ علاقوں میں کئی ایسے لوگ ہیں جنہوں ن بے قصور نوجوانوں کونوکریوں کاوعدہ کرکے لاکھوں روپے کی دھوکہ دہی کاالزام لگایاہے۔اسکے بعد وہ کشمیرسے بھاگ گیااورہری بھری چراگاہوں کے لیے آئی ایس آئی کے بینڈ ویگن میں شامل ہوگیاجس کااس نے اپنے لیے تصورکیاتھا۔اس کایہ دوغلاپن حال ہی میں اس وقت کھل کرسامنے آیاجب ایک ٹویٹراسپیس پر وہ کشمیرکے لوگوں کوتشددپراکسارہاتھااور اسی سانس میں مان لیاکہ اگراسے یقین ہوتاکہ آزادی مل جائے گی تووہ اپنی جان بھی قربان کردیتا،لیکن چونکہ یہ جلد نہیں ہورہاہے،وہ اس پرتشدد راستے سے دور رہے گا۔اسکے بجائے،وہ چاہتاتھاکہ وادی کے بھونڈے نوجوان بے ہوش ہوکرمرجائیں تاکہ بیرون ملک اسکی تجوریاںبھرسکیں۔

اس طرح کے سفیدکالروالے دہشتگردوں اورکم مراعات یافتہ نوجوان جوانکے ایجنڈے کاشکارہوکرریاست کے خلاف ہتھیاراٹھاتے ہیں،کی نفرت سے جوشیطانی حلقہ تشکیل پاتاہے وہ ایک سرطانی واقعہ ہے جس نے کشمیرکے نوجوانوں کی بڑی تعداد کی زندگیاں اجاڑدی ہیں۔
اگرچہ حکومت ہندکی طرف سے وادی میں کام کرنےوالی اپنی ایجنسیوں کے ذریعے نوجوانوں کوقومی دھارے میں شامل کرنے کی کوششیں جاری ہیں۔ان کوششوں کااس وقت تک کوئی خاطرخواہ نتیجہ نہیںن کلے گاجب تک کشمیری عوام ان وائٹ کالردہشتگردوں کے خفیہ ایجنڈے کا ادراک نہیں کرلیتے۔
آج کشمیرکے نوجوانوں کودرپیش ایک اوربڑاخطرہ منشیات کی دہشتگردی ہے جوکہ سفیدفام دہشتگردوں کی شمولیت کے بغیر پروان نہیں چڑھ سکتی جنکے پاس دہشتگردی کی مالی اعانت کے اتنے بڑے اورمہنگے ذریعہ کوبرقراررکھنے کی گنجائش ہے۔انسٹیٹیوٹ آف مینٹل ہیلتھ اینڈ نیوروسائنسز (آئی ایم ایچ اے این ایس) سرینگرکے ڈی ایڈکشن سینٹرکی رپورٹوں کے مطابق وادی کشمیرمیں20- 2018 کے پچھلے تین سالوں میں منشیات کے استعمال میں 1500 فیصداضافہ ہواہے۔سب سے زیادہ متاثرہ اضلاع اننت ناگ اورسرینگرکے اضلاع میں افیون پرخرچ 3,74,90,329 روپے ہے۔

ایک سخت وائٹ کالردہشتگردجواوورگراونڈ ورکر (OGW) کے طورپرکام کرتاہے،نوجوانوں کودہشتگردی کے لیے بھرتی یااکسانے کے ذریعے دہشت گردی کے سرحدپارایجنڈے کوآگے بڑھانے کے علاوہ،مقامی اورغیرملکی دہشتگردوں کومحفوظ رکھنے میں بھی سہولت فراہم کرتاہے۔تمام ضروریات کی فراہمی کے ذریعے اندرونی علاقوں میں چاہے وہ سخت نقدی ہو،خوراک،ادویات کی فراہمی یایہاں تک کہ ٹھکانے،ایسے OGWs اکثرکام کرنے کے لیے بہت اچھے،اچھی طرح سے قائم اورتکنیکی طورپربااختیارافرادہوتے ہیں جودہشتگردوں کی مددکرتے ہیں جوسرحدپاررابطے کوبرقراررکھنے،حساس علاقوں کی نقشہ سازی،حامیوں کونشانہ بنانے کے لیے ضروری تکنیکی بنیادی ڈھانچے کے ساتھ مددکرتے ہیں۔ہندوستانی عوام اورملک کی سیکورٹی فورسزکی چوکس نظروںسے بچ رہے ہیں۔اسطرح،ایک سفیدفام فردکی آڑمیں کام کرنے والا OGW دہشتگردی کے ناکام مقصدکے لیے کام کرنے کے لیے بہت زیادہ بنیادپرست،حوصلہ افزائی اورتیارہے اوراسلیے وہ ایک حقیقی دہشتگرد سے کہیں زیادہ خطرناک ہے جوہتھیاراٹھاکردہشتگردی کاپرچارکرتاہے۔

یہ سفیدپوش لوگ عام نظروں سے چھپے ہوئے ہیں اورصرف آئی ایس آئی کی طرف سے فراہم کی جانے والی سہولیات کوختم کرنے کے لیے باہرنکلتے ہیں۔وہ اساتذہ،ڈاکٹر،تاجر،مقامی دکاندار،یا یہاں تک کہ ممتازشخصیات بھی ہوسکتی ہیں،جنکے ساتھ مقامی آبادی روزانہ کی بنیادپربات چیت کرسکتی ہے۔ایسے سفیدپوش دہشتگرد ہمیشہ کے لیے ممکنہ بے گناہ اہداف کی تلاش میں رہتے ہیں جن سے وہ مالی امداد،مذہبی تعصب،علاقائی یامذہبی دشمنی کے بہانے ان سے چمٹے رہ سکتے ہیں۔

لہٰذاکشمیرکے لوگوں کے لیے یہ ضروری ہے کہ وہ اپنی کمیونٹی کے درمیان ایسی خطرناک کالی بھیڑوں کی نشاندہی کریں اورکشمیرکے مستقبل کوبچانے کے لیے انہیں کمیونٹی اورانتظامیہ کے سامنے بے نقاب کرکے انکے مذموم ایجنڈے سے گریزکریں۔یہ ذمہ داری ہروالدین،استاد،مولوی اوریہاں تک کہ ساتھیوں کے ہاتھ میں ہے کہ وہ اس بات کویقینی بنائیں کہ کوئی انکاجاننے والادوغلے پن کے ایسے نمونوں کاشکارنہ ہو۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.