• Sun. Nov 28th, 2021

کشمیری کی بحالی بالی ووڈفلمنگ سپاٹ کے طورپر۔

Byadmin

Oct 22, 2021

کشمیرکے ساتھ بالی ووڈکی محبت کی کہانی 1960 اور 70 کی دہائی کی ہے۔ شمی کپورنے ڈل جھیل پر ” شکارہ کاروان کیااسکی “ گانے میں
” شکارہ “ کوامرکردیاکیونکہ اس نے ” کشمیرکی کلی “ میںایک خوبصورت شرمیلاٹیگورکوجگایاتھا۔ اس وقت ، وادی کے خوبصورت مقامات کے پس منظرمیں
کئی فلمیںبنائی گئی تھیں۔ کچھ انتہائی رومانوی اورسدابہارگانوںکوبرف پوش پہاڑیوںاورکشمیرکی سرسبزخوبصورتی کی تصویرکشی کی گئی۔ ‘جب جب پھول کھلے’ (1965) ، ‘آرزو’ (1965) ، ‘جانور’ (1965) ، ‘روٹی’ (1974) ، اور ‘میرے صنم’ (1965) جیسی فلموںنے وادی کی ایک خوبصورت تصویرکھینچی اور ، شہری ہندوستان میںپروان چڑھنے والوںکے لیے ، کشمیرکادورہ کرنا ، ‘زمین پرجنت’ ، ایک خواب بن گیا۔ فلم سازوںنے فطرت کواپنی پوری شان سے پکڑااوراس نے بالآخرسیاحت کے شعبے کوفروغ دیا۔ وہ لوگ جوخوبصورت سونہ مرگ گھاس ، مغل گارڈن ، گلمرگ یاپہلگام کومحسوس نہیںکرسکتے تھے ، فلم سازوںکی عینک سے انکی سکون کالطف اٹھایا۔ 1970 کی دہائی کے آخراور 80 کی دہائی کے اوائل میں ، سینماو¿ںنے بالی ووڈکے کشمیرکی خوبصور ت خوبصورتی کے ساتھ ‘کبیرکبھی’ (1976) ، ‘نوری’ (1979) اور ‘سلسلہ’ (1981) جیسی سپرہٹ فلموںکودیکھا۔ تاہم ، 1990 کی دہائی تک ، خطے نے کچھ انتہائی پرتشدداوقات دیکھے اورکشمیرکوسنیمامیںایک نئی داستان ملی۔ وادی میںکشیدگی سے کہانیاںہڑپ ہوگئیں۔ کشمیرمیںسیاسی ہنگامہ آرائی کے پس منظرمیں ‘روجا’ (1992) اور ‘دلسی’ (1998) جیسی فلمیںبنائی گئیں۔ ‘مشن کشمیر’ (2000) اور ‘یاہان’ (2005) نے خطے میںبدامنی کوبھی دکھایا۔ وادی میںبڑھتی ہوئی بدامنی اوربڑھتی ہوئی کشیدگی نے فلم بینوںکواپنی شوٹنگ کی منزلیںتبدیل کرنے پرمجبورکردیااوراسکے ساتھ ہی فلم انڈسٹری میںنام کمانے کے لیے پرکشش مقامی لڑکوںکے خواب بھی مٹ گئے۔
60 اور 70 کی دہائی کاایک وقت تھا ، جب بالی وڈکی ہربڑی فلم کم ازکم ایک گاناشوٹ کرتی تھی ، اگرپوراشیڈول کشمیرکے غیرملکی علاقوںمیںنہیں۔ لیکن شمی کپورکے دنیاہو! اورکشمیرکی کلی میںشرمیلاٹیگورکوڈل جھیل پرسی رنگ کرناایک دوردرازمگرخوبصورت یادکاحصہ تھا۔ اسکامطلب یہ نہیںکہ اچھے پرانے دن دوبارہ واپس نہیںآسکتے۔ ہندوستانی فلم انڈسٹری کشمیرکے ساتھ اپنے رومانس کودوبارہ زندہ کررہی ہے – ایک ایسی منزل جوکبھی فلم بینوںاورناظرین کی پسندیدہ تھی۔ جلدہی ، وادی میںکھلنے والے ٹولپس ، نر م جھیلوں ، مخروطی درختوںاور ڈل جھیل پرکیمرے لگائے جائیںگے۔ اس سال کے شرو ع میں ، عامرخان جنہوںنے اس علاقے میںصرف ’لال سنگھ چڈھا‘ کے ایک حصے کی شوٹنگ کی تھی ، لیفٹیننٹ گورنرمنوج سنہاکے ساتھ جموں و کشمیرکی فلم پالی سی شروع کرنے کے لیے وادی میںتھے۔ یونین ٹریٹری میںفلم انڈسٹری کی مجموعی نشوونماکوفروغ دینے کے لیے تیارکی گئی اس نئی پالیسی کے تحت-‘جموں و کشمیرفلم ڈویلپمنٹ کونسل’ قائم کی جائے گی جوکہ شوٹنگ لوکلزکی ترقی کوآسان بنائے گی ، منزل کی مارکیٹنگ پرتوجہ دے گی ، جموںکومنظم کرےگی کشمیرفلم فیسٹیول اورانکی توجہ خطے سے فلموںکی بحالی اورتحفظ کی طرف بھی۔ یہ بندسنیماہالوںکوبحال کرنے ، موجودہ سنیماہالوںکواپ گریڈکرنے ، اورملٹی پلیکس اورسنیماہالزکے قیام کی حوصلہ افزائی کرکے فلمی نمائش کے لیے بنیادی ڈھانچہ بھی فراہم کرےگا۔
اس اقدام کی قیادت کرتے ہوئے بھارتی فوج معروف ویڈیوگرافروںاورفوٹوگرافروںکومدعوکررہی ہے اوروادی کے نوجوانوںکے لیے ورکشاپس کااہتمام کررہی ہے جس میںنوجوانوںکوفوٹوگرافی اورویڈیوگرافی کے اہم اسباق دیے جارہے ہیںجوآنے والے وقتوںمیںکام آئیںگے۔ کشمیرمیںفلموںکی شوٹنگ کوواپس لانے کی یہ ایک یادگارکوشش ہے ، جوکہ کشمیرکے عظمت کے دنوںکوزندہ کرنے کے لیے کچن ڈوبنے کی ایک قسم ہے۔
کئی سالوںکے دوران ، خوبصورت وادی نے بے شمارہندی فلموںکے لیے ایک پس منظرفراہم کیاہے ، اکثر و بیش تر ، اپنے آپکواس داستان میںڈھالتے ہوئے کہ اسکوناقابل تلافی قراردیاجاتاہے ، یہ تصورکرنامشکل ہے کہ فلم کوکہیںاورشوٹ کیاجائے گا۔ کیاآپ امیتابھ بچن کوکشمیرکے بالکل اورویران پس منظرکے مقابلے میںکہیںاورکبھی ‘کبھی کبھی میرے دل میں’ جاتے ہوئے دیکھ سکتے ہیں؟ کیاوادی کی ویران گلیوںسے حیدرکی ‘ہیلوہیلوہیلو’ تقریرآدھی اثرانگیزہوگی؟ حال ہی میںبالی وڈکی ” اوڑی: دی سرجیک ااسٹرائیک “ اور ” شیرشاہ “ نے بھی ایک بارپھرکشمیرکواپنی پوری شان و شوکت سے پکڑلیاہے ، یہاںتک کہ فو ج کے مہلک مشن پیش منظرمیںکھیل رہے ہیں۔ کشمیراب ایک بارپھربین الاقوامی سیاحت کے نقشے پرہوگااورفلم کی شوٹنگ نہ صرف وادی کے لوگوںکے لیے روزگارپیداکرے گی بلکہ دنیابھرسے ہزاروںسیاحوںکواس مبارک سرزمین کی شان و شوکت کے لیے مدعوکرے گی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *